Jump to content
IslamicTeachings.org
Bint e Aisha

موبائل کا فتنہ

Recommended Posts

 

نمازِ باجماعت کی سعادت چھوڑ دی ہم نے 
موبائل کی نَحوست ہے تلاوت چھوڑ دی ہم نے

مساجد میں،مدارس میں،نبی کے شہر میں سیلفی
بِنا سیلفی مریضوں کی عیادت چھوڑ دی ہم نے

بیداری کی دعا سےپہلے پیغامات پڑھتے ہیں
ہوس کی دوڑمیں ہرایک سُنت چھوڑ دی ہم نے

پہلےنعتیں سُنی جاتی تھیں اب دیکھی بھی جاتی ہیں
غمِ تشہیر میں تقویٰ کی دولت چھوڑ دی ہم نے

صحابہ مردِ میداں تھے مگر ہم غازیِ فیس بک
ہماری جاں کو رب لے وہ تجارت چھوڑ دی ہم نے

خدائے پاک اور بندوں میں حائل یہ موبائل ہے
ڈیجیٹل کہہ کےتصویروں سےنفرت چھوڑ دی ہم نے

جوشوقِ خودنمائی کے بھنور میں ڈُوب کر خوش ہیں
وہ سیلفی باز لوگوں کو نصیحت چھوڑ دی ہم نے

نبیِ رحمتُ لِلعالَمیں کے  شہر جانا ہو
فرشتو! محنتِ دعوت کہو مَت چھوڑ دی ہم نے

گناہوں کے تسلسل سے نہ ایماں سلب ہوجائے 
اگر یوں ہی نگاہوں کی حفاظت چھوڑ دی ہم نے 

سکونِ دل کہاں کیسے میسّر ہو ہمیں ہدہد
ندامت والے کاموں پر ندامت 
چھوڑ دی ہم نے۔

ہدہد الہ آبادی 

 

Share this post


Link to post
Share on other sites

موبائل 

موبائل  کے  فتنے   میں  سب   مُبتلا  ہیں
جو   پہلے  نہیں تھے   وہ  اب  مُبتلا  ہیں

مُبلغ ،      مُدّرِس ،       مُجاہد  ،      مُقرّر
عَجَب  شے  کی لَت میں عَجَب  مبتلا ہیں

مُصور،     مُصنّف،     زمیں دار ،     دہقاں
میراثی    و    عالی  نَسَب     مبتلا    ہیں 

کتابوں کے  شوقین   بھی   زَد   میں  آئے 
جو سمجھاؤ  کہتے ہیں  کب   مبتلا  ہیں

کئی   بِیبِیاں   ہم  سفر    ڈھونڈتی    ہیں
کئی   بِیبِیاں    بے   سبب     مبتلا     ہیں

میسنجرسےنکلےتو واٹس ایپ میں ڈھوبے
یوں ہی خوامخواہ  روز و شب  مبتلا ہیں

مُسلسل    موبائل     اُٹھائے    ہوئے     ہیں
عَجَم    مُبتلا   ہیں      عَرَب   مُبتلا    ہیں 

گنواروں    پہ    تنقید    کرتے    ہو    ہُدہُد
کہ   افسوس    اہلِ    اَدَب    مُبتلا     ہیں

ہدہد الہ آبادی

Share this post


Link to post
Share on other sites

? موبائل کی عادت

ہاتھوں میں  موبائل ہے  عبادت سے دُور  ہوں
سردارِ  انبیاء   کی   اطاعت   سے   دُور  ہوں

دعوت سے  دُور،  پیرِ طریقت  سے  دُور  ہوں
اغیار   کے  قریب  ہوں  مِلت  سے   دُور  ہوں

تسبیح  ہے  نہ قرآن  ہے  ہاتھوں  میں   آجکل
اذکار  کے   انوار  و  تلاوت   سے    دُور   ہوں

جب  سے  میں حسینوں کا طلب گار ہُوا ہوں
آقائے   نامدار   کی   مِدحت   سے   دُور  ہوں

یہ   میری   بدنصیبی    یا    اثراتِ   معصیت
خدامِ   صحابہ   کی  جماعت  سے  دُور  ہوں

تلوار   کیا   اُٹھاوں   گا   دشمن   کے    مقابل
مسواک جیسی بہتریں  سُنت  سے  دُور  ہوں

غافل  سا  ہوں  میں  کُونُو مَعَ الصّادِقِین  سے
سچوں کی  ہمنشینی و خدمت  سے دُور ہوں

سیلفی بھی معصیت ہے رِیا ہے مگرمیں کیوں
توبہ   سے  دُور  اشکِ  ندامت  سے  دُور  ہوں

صوفی ہوں،نہ داعی ہوں،نہ غازی ہوں میں ہُدہُد
جُھوٹوں کا ہمسفر ہوں صداقت سے دُور  ہوں

✍ہُدہُد الہ آبادی

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now

×
×
  • Create New...