Jump to content
IslamicTeachings.org
Bint e Aisha

Virtues of Sha'aban

Recommended Posts

*شعبان کی فضیلت*

 

قسط 2

 

*شب برات میں عبادت:*

 

امت مسلمہ کے جو خیرالقرون ہیں یعنی صحابہ کرام کا دور ، تابعین کا دور، تبع تابعین کادور، اس میں بھی اس رات کی فضیلت سے فائدہ اٹھانے کا اہتمام کیا جاتا رہا ہے،لوگ اس رات میں عبادت کا خصوصی اہتمام کرتے رہے ہیں، لہٰذا اس کو بدعت کہنا، یا بے بنیاد اور بے اصل کہنا درست نہیں ، صحیح بات یہی ہے کہ یہ فضیلت والی رات ہے، اس رات میں عبادت کرنا باعث ِ اجر و ثواب ہے اور اسکی خصوصی اہمیت ہے۔

 

*♦عبادت کا کوئی خاص طریقہ مقرر نہیں♦:*

 

البتہ یہ بات درست ہے کہ اس رات میں عبادت کا کوئی خاص طریقہ مقرر نہیں کہ فلاں طریقے سے عبادت کی جائے ، جیسے بعض لوگوں نے اپنی طرف سے ایک طریقہ گھڑ کر یہ کہہ دیا کہ شب ِ برات میں اس خاص طریقے سے نماز پڑھی جاتی ہے ، مثلاََ پہلی رکعت میں فلاں سورت اتنی مرتبہ پڑھی جائے، دوسری رکعت میں فلاں سورت اتنی مرتبہ پڑھی جائے وغیرہ وغیرہ، اسکا کوئی ثبوت نہیں، یہ بالکل بے بنیاد بات ہے، بلکہ نفلی عبادت جس قدر ہوسکے وہ اس رات میں انجام دی جائے، نفل نماز پڑھیں ، قرآن کریم کی تلاوت کریں ، ذکرکریں ، تسبیح پڑھیں ، دعائیں کریں ، یہ ساری عبادتیں اس رات میں کی جاسکتی ہے لیکن خاص طریقہ ثابت نہیں۔

 

((جاری...))

 

*Virtues Of Sha'aban*

 

Part 2

 

*Worshipping during Shab-e-Baraat:*

 

People had tried to exceptionally benefit from the virtues of this night even in the best periods of ummat-e-muslimah, i.e the period of sahaba, taba'een, tabe taba'een. People have been regularly worshipping in this night. Therefore, regarding the worship of this night as innovative, unreal and baseless is extremely wrong. The fact is that shab-e-baraat is a night of virtues, worshipping in this night is a cause of gratuity and reward and it has a special significance.

 

*♦There is no specific way of worshipping in this night♦:*

 

However, this is true that there is no specific way of ibadah in this night. Some people have devised some specific forms of worship or offering salah and say that salah is offered in such a manner in the night of 15th Sha'aban. For eg : Reciting a particular surah for specific number of times in the first rakaat and some other particular suraah in the second rakaat etc etc, there is no such evidence for this, it is absolutely baseless. However, it is permissible to perform nafl ibadah (voluntary acts) such as voluntary prayers, tasbeeh, duas, etc. All these forms of worship can be adopted in this night, but no specific way is proved through authentic sources.

 

((To be continued..))

Share this post


Link to post
Share on other sites

*شعبان کی فضیلت*

 

قسط 3

 

 

 

*شبِ برات میں قبرستان جانا:*

 

اس رات میں ایک اور عمل ہے جو ایک روایت سے ثابت ہے وہ یہ ہے کہ حضور نبی کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم جنت البقیع میں تشریف لے گئے، اب چونکہ حضور صلی اللہ تعالی علیہ وسلم اس رات میں جنت البقیع میں تشریف لے گئے اس لئے مسلمان اس بات کا اہتمام کرنے لگے کہ شبِ برات میں قبرستان جائیں ، لیکن میرے والد ماجد حضرت مفتی محمد شفیع صاحب قدس اللہ سرہ ایک بڑی کام کی بات بیان فرمایا کرتے تھے، جو ہمیشہ یاد رکھنی چاہئے، فرماتے تھے کہ جو چیز رسول کریم صلی اللہ تعالی علیہ وسلم سے جس درجہ میں ثابت ہو اسی درجے میں اسے رکھنا چاہئے، اس سے آگے نہیں بڑھنا چاہئے، لہٰذا ساری حیاتِ طیبہ میں رسول کریم سے ایک مرتبہ جانا مروی ہے، کہ آپ شبِ برات میں جنت البقیع تشریف لے گئے ، چونکہ ایک مرتبہ جانا مروی ہے اس لئے تم بھی اگر زندگی میں ایک مرتبہ چلے جاؤ تو ٹھیک ہے ، لیکن ہر شب برات میں جانے کا اہتمام کرنا،التزام کرنا، اور اسکو ضروری سمجھنا اور اسکو شب برات کے ارکان میں داخل کرنا اور اسکو شب برات کا لازمی حصہ سمجھنا اور اسکے بغیر یہ سمجھنا کہ شب برات نہیں ہوئی ، یہ اسکو اسکے درجے سے آگے بڑھانے والی بات ہے۔

 

*15 شعبان کا روزہ:*

 

ایک مسئلہ شب برات کے بعد والے دن یعنی پندرہ شعبان کے روزے کا ہے، اسکو بھی سمجھ لینا چاہئے، وہ یہ کہ سارے ذخیرہ حدیث میں اس روزہ کے بارے میں صرف ایک روایت میں ہے کہ شب برات کے بعد والے دن روزہ رکھو لیکن یہ روایت ضعیف ہے لہٰذا اس روایت کی وجہ سے خاص پندرہ شعبان کے روزے کو سنت یا مستحب قرار دینا بعض علماءکے نزدیک درست نہیں البتہ پورے شعبان کے مہینے میں روزہ رکھنے کی فضیلت ثابت ہے لیکن 28 اور 29 شعبان کو حضور صلی اللہ تعالی علیہ وسلم نے روزہ رکھنے سے منع فرمایا ہے، کہ رمضان سے ایک دو روز پہلے روزہ مت رکھو، تاکہ رمضان کے روزوں کے لئے انسان نشاط کے ساتھ تیار رہے۔

 

((ختم شد…))

 

*​Virtues Of Sha'aban​*

 

Part 3

 

*To visit the graveyard on the night of 15th shabaan:*

 

Another act of this night that is also proven by a narration is that Nabi kareem sallalahu alaihi wassalam visited jannatul baqi on this night, now since the Prophet visited Jannatul baqee the Muslims too started making it a practice to visit the graveyard on the night of 15th shabaan. However, my noble father would always talk about an important point, which should always be remembered. He would say that the extent to which a particular act is performed by Rasoole kareem sallalahu alaihi wassalam should be limited to that extent and that limit should be maintained.

Therefore since during the whole lifetime of Rasulullah sallalahu alaihi wassalam, he visited jannatul baqi only once on the night of 15 shabaan. So if you also visit the graveyard on the night of 15th shabaan once in a life time, it is acceptable. But to make it a practice and to consider it incumbent and include it among the deeds of the night of 15th shabaan and to consider it an indispensable part of shabe barat and to think that without performing this act the worship of shabe barat will be incomplete, would be exceeding the level of its actual rank.

 

*The fast of 15 Shabaan:*

 

There is an issue concerning the fast on the day of 15 shabaan, wich needs to be understood carefully, that among the numerous ahaadith, only one narration is present which states to observe a fast on the day of 15 shabaan, however this narration is weak. Therefore, on the basis of this narration, according to many scholars it is incorrect to consider the fast on the day of 15 shaban as sunnah or mustahab. However the virtues of fasting during the entire month of shaban is proven, but Rasulullah sallalahu alaihi forbidded from fasting on the 28th and 29th of shaban, that do not fast one or two days prior to Ramadhan so that one may be prepared for the fasts of Ramadhan in good spirit.

 

((The end...))

Share this post


Link to post
Share on other sites

Create an account or sign in to comment

You need to be a member in order to leave a comment

Create an account

Sign up for a new account in our community. It's easy!

Register a new account

Sign in

Already have an account? Sign in here.

Sign In Now


×